متنازع اور قابل اعتراض مواد 87 کتابوں، 11 اخبارات و جرائد 14نفرت انگیزسی ڈیز پر پابندی لگادی گئی

" >

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پنجاب میں نیشنل ایکشن پلان کے تحت گزشتہ 5 سال میں متنازع اور قابل اعتراض مواد کی وجہ سے 87 کتب پر پابندی عائد گئی ، جن میں سے 4غیرملکی مصنفین کی ہیں 11اخبارات وجرائد کے ڈیکلریشن منسوخ کرکے ان کے خلاف کارروائی کی گئی۔ 4 کتابچوں اور14 سی ڈیز

کو نفرت انگیز قرار دے کر پابندی لگائی گئی جبکہ 3جرائد کو وارننگ جاری کی گئی،متحدہ علما بورڈ کی سفارشات کے بعد محکمہ داخلہ پنجاب نے ان تمام کتب و جرائد پر پابندی لگائی۔ روزنامہ جنگ میں آصف محمود کی شائع خبر کے مطابق 2020 میں مصنف لیزلے ہیزلٹن کی لندن سے شائع ہونے والی کتاب وی فرسٹ مسلم،اسی مصنف کی نیو یارک سے شائع ہونے والی آفٹر دی پرافٹ (شیعہ سنی تقسیم کی کہانی) اور مصنف مظہر الحق کی کتاب ہسٹری آف اسلام پر پابندی عائد کی گئی۔ 2015 سے اب تک جن کتب پر پابندی عائد کی گئی ہے ان میں محمد اقبال گیلانی کی کتاب شرک کے بارے میں چند اہم مباحث، محمد ثقلین کی کفر و شرک کی اقسام، حافظ محمد فیض کی تیرے دشمن سے کیا رشتہ ہمارا یا رسول اللہ، کیپٹن (ر) ڈاکٹر مسعود الدین عثمانی کی ایمان خالص اور ایمان خالص حصہ دوم، عذاب برزخ،بھولا سبق، تعویزات اور شرک، وفات ختم الرسل، محمد حنیف کی صلو کے مسائل، دین داری یا دوکانداری، ایم اے وسیم کی ناظرہ اور قرآن کریم، ابو معاویہ مولانا محمد ایاز کی عید میلاد النبی کی حقیقت، مسلمان اور شرک، پیر محمد افضل قادری کی کیا سپاہ صحابہ و لشکر جھنگوی اہل سنت و الجماعت ہیں؟۔

(Visited 1 times, 1 visits today)

اپنا تبصرہ بھیجیں