مولانا فضل الرحمن کی حسن نثار کو” دھمکیاں” معروف صحافی امیر جے یو آئی سے ذاتی گلہ سامنے لے آئے

" >

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے معروف صحافی اور تجزیہ کار حسن نثار نے کہا ہے کہ وزیراعظم نے بلیک میل کا لفظ غلط استعمال کیا لیکن ان کی نیت غلط نہیں تھی انہیں لفظوں کے انتخاب میں احتیاط کرنی چاہئے۔ مریم نے کوئٹہ جاکر اچھا کام کیا انہیں

ماڈل ٹائون جاکر اپنے باپ اور چچا کی طرف سے معافی بھی مانگنی چاہئے، مولانا فضل الرحمن خود ٹھیک ہیں مگر ان کی صحبت غلط ہے، یہ بات درست ہے پرویز مشرف کا دور ن لیگ اور پیپلز پارٹی سے بہتر تھا۔ٹرمپ کے حامیوں کے کیپٹل ہل پرحملہ پر انہوں نے کہا کہ ٹرمپ کے حامیوں کا کانگریس پر دھاوا سپر پاور کا نہیں جمہوریت کا حال ہے، مسلمانوں کے پاس سائنسی ایجاد بھی غیروں کی اور سیاسی و مالیاتی نظام بھی غیروں کا ہے، مسلمانوں کا نظام خلافت کا ہے جو ملوکیت و آمریت وغیرہ کیخلاف ہے، ہماری بدنصیبی یہاں چپڑ قناتیے مغربی جمہوریت کا راگ الاپتے ہیں،مغربی جمہوریت نے ہندوستان کو مودی اورا مریکا کو ڈونلڈ ٹرمپ دیا۔فضل الرحمن کے بیان عمران کا وفادار ہمارا غدار ہے پر تبصرہ کرتے ہوئے حسن نثار کا کہنا تھا کہ مجھے مولانا فضل الرحمن بہت پیارے لگتے ہیں لیکن وہ مجھے اپنی زبردستی صفوں سے نکال رہے ہیں، مولانا فضل الرحمن سے ایک ذاتی گلہ بھی ہے کہ انہوں نے مجھے دو تین دفعہ آنے کی دھمکی دی تھی لیکن تشریف نہیں لائے اگر مل لیتے تو اچھی بات تھی۔حسن نثار نے کہا کہ وزیراعلی پنجاب عثمان بزدار نے بالکل درست بات کی ہے کہ اس معاشرے میںا ڑھائی سال میں ان کا کوئی سکینڈل سامنے نہ آنا بڑی بات ہے۔

(Visited 1 times, 1 visits today)

اپنا تبصرہ بھیجیں