1,806

یہ ہے انٹرنیٹ کا ڈسا معاشرہ : اچھے بھلے گھر کی1 خوبصورت خاتون نے نفس کی آگ میں تپ کر ایسی حرکت کر ڈالی کہ پورا شہر کانوں کو ہاتھ لگانے لگا

لاہور (نیوز ڈیسک) عورت پر ہونے والے تشدد اور اس کے ساتھ ہونے والی زیادتیوں پر تو آئے روز خبریں موصول ہوتی رہتی ہیں جن کی پُر زور مذمت بھی کی جاتی ہے لیکن حال ہی میں لاہور میں شمالی چھاؤنی کے قریب علاقہ میں بیوی کے ہاتھوں شوہر کے

قتل کا ایک افسوسناک واقعہ سامنے آیا جس کے بعد پولیس نے تفتیش کا آغاز کیا تو یہ انکشاف ہوا کہ خاتون نے اپنے عاشق کے ساتھ مل کر اپنے ہی خاوند کو موت کے گھاٹ اُتار دیا۔تفصیلات کے مطابق ملزمہ نے اپنے شوہر علی کو پہلے نشہ آور چیز پلا کر بے ہوش کیا جس کے بعد اس کی کنپٹی پر پستول رکھ کر گولی مار کر اسے قتل کر دیا۔ علی نجی ہوٹل میں ملازمت کرتا تھا۔ ملزمہ اور مقتول کے تین بچے بھی تھے۔ دوران تفتیش ملزمہ مریم نے پولیس کو بتایا کہ میرے شوہر کا کردار ٹھیک نہیں تھا۔خاندانی ذرائع کے مطابق مقتول بار بار اپنی بیوی کو ناجائز تعلقات نہ رکھنے اور گھر پر رہنے کی ہدایت کرتا تھا لیکن وہ اُس کی ایک نہیں مانتی تھی۔ناجائز تعلقات کی آڑ میں ملزمہ نے اپنے ہی شوہر کو پہلے تو قتل کیا اور پھر اس پر بدکردار ہونے کا الزام بھی عائد کر دیا۔ مقتول کی والد نے بتایا کہ ملزمہ نے میرے بیٹے کو پھنسایا۔ اس کی کم عمر میں ہی شادی ہو گئی تھی ۔ شادی کے کچھ عرصہ تک وہ بالکل ٹھیک رہی لیکن اس کے بعد اسے پتہ نہیں کیا ہوا۔ ہمیں بالکل علم نہیں تھا کہ یہ کسی شخص کے پیار میں مبتلا ہے۔جس پستول سے اس نے میرے بیٹے کو قتل کیا وہ اُسی شخص کا تھا جس سے اس کا تعلق تھا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمہ مریم کی گلفام سے دوستی ہوئی جو محبت میں تبدیل ہو

گئی اور اسی محبت میں اندھی ہو کر مریم نے اپنے شوہر کو قتل کر دیا اور اپنے ہی بچوں کے سر سے باپ کا سایہ شفقت چھین لیا۔ علی کے اہل خانہ نے مریم کو سخت سے سخت سزا دینے کی اپیل کی ہے۔ مقتول علی کی والدہ نے مزید کیا کہا آپ بھی دیکھیں:

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں