22

سب کچھ تباہ : عمران خان کے دور میں پاکستانیوں کے ساتھ جلد کیا ہونیوالا ہے ؟ نامور گلوکار جواد احمد نے تشویشناک بات کہہ ڈالی

لاہور(ویب ڈیسک)معروف گلوکار اورچیئرمین برابری پارٹی پاکستان جواد احمد نے کہا ہے اس وقت ملک کی کشتی مسائل کے گرداب میں پھنس چکی ہے جسے نکالنے کے لیے تمام جمہوری قوتوں کو جدوجہد کرنا ہو گی۔ ریاست مدینہ کی دعویدار حکومت کی اس سے بڑی نااہلی اور کیا ہوگی کہ رمضان اور عید کے موقع پر

مہنگائی کا جادو سرچڑھ کربولتارہا، عوامی حکومتیں عوام کی خواہشات پر چلتی ہیں جعلی حکومتیں دوسروں کی شرائط پر چلتی ہیں، دھاندلی اور چور دروازے سے آنے والے نالائقوں کا اپنا کوئی ویژن نہیں ہوتا۔ ان کا مزید کہنا کہ یہ پہلی حکومت ہے جس نے نو ماہ میں 10ارب ڈالر سے زائد کا قرضہ لیا جسکا خمیازہ پوری قوم کئی سال تک بھگتے گی۔ حکومت کاہر وزیر خو د کو وزیراعظم سے کم نہیں سمجھ رہا وزیرو ں اور مشیرو ں کی کارکر دگی صر ف میڈ یا میں مخا لفین پر تنقید کے علاوہ زیرو ہے پی ٹی آئی کی حکومت کو زیادہ موقع دیاگیا توپاکستان معاشی طورپرتباہ ہوجائے گا۔ دوسری جانب ایک اور خبر کے مطابق قائم مقام امیر جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے اپنے ایک بیان میں کہاہے کہ شمالی وزیرستان میں فوجی افسروں اور جوانوں کی شہادت پوری قوم کے لیے دکھ اور صدمہ کا باعث ہے ۔ ہرنائی بلوچستان میں دہشتگرد حملہ میں ایف سی اہلکاروں و شہریوں کی شہادت سے بڑا دکھ ہوا ۔قومی سلامتی کے تحفظ اور دہشتگردی کے خاتمہ کے لیے سیکورٹی فورسز کی قربانیاں لازوال ہیں ۔ پوری قوم امن کے استحکام اور دہشتگردی کے خاتمہ کے لیے متحد ہے ۔ ملک کے بدترین اقتصادی بحران میں افواج پاکستان کا مالی ایثار قابل قدر ہے ۔ بجٹ کٹوتی یقیناً دفاعی صلاحیت پر اثر انداز نہیں ہوگی ۔ پاکستان عالمی سازشوں اور بھارتی ریشہ دوانیوں کا شکار ہے ۔ مضبوط دفاع اور یکسو قوم ہی دشمن کی جارحیت کا سد باب ہے ۔ لیاقت بلوچ نے کہاکہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں مظالم کی انتہا کر رہاہے ۔ روزانہ کی بنیادوں پر چن چن کر کشمیری شہید کیے جار ہے ہیں ۔ ان حالات میں وزیراعظم اور وزیر خارجہ کا بھارت سے مذاکرات کی چٹھیاں لکھنا کمزور مو قف ہے ۔ قومی کشمیرپالیسی اور عالمی محاذ پر بھارت کو بے نقاب کرنا حکومت کی ترجیحی پالیسی ہونی چاہیے ۔ لیاقت بلوچ نے کہاکہ اقتصادی بحران شدید تر ہے ۔معاشی محاذ پر حکومت کی نااہلی ، ناتجربہ کاری اور بغیر کسی سوچ و بچار کے اعلانات اور اقدامات معاشی زوال کو تیز کر رہے ہیں ۔ خود انحصاری اور قومی اتحاد کی بحالی کی بجائے فوجی آمریتوں ، شریف اور بھٹو ادوار کی پالیسیوں کو ہی آگے بڑھایا گیا اس لیے بحران اور زوال بھی برق رفتار ہے ۔(ش س م)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں