920

بریکنگ نیوز: لاہور یونیورسٹی میں دھماکہ ۔۔۔ بڑی تعداد میں طالبات کی شہادت کی اطلاعات

لاہور(نو.ز ڈیسک) رائیونڈرور پر واقع نجی یونیورسٹی لاہور یونیورسٹی میں دھماکہ کے بعد حالات تشویشناک ہو گئے ہیں ، تازہ ترین اطلاعات کے مطابق 3 لڑکیوں کی موت ہو چکی ہے جبکہ 10 سے زائد لڑکیوں کی حالت خطرے میں ہے ، زخؐیوں کو جناح ہہسپتال لاہور منتقل کر دیا گیا ہے ،

تحقیات کے مطابق دھماکہ گیس سلنڈر پھٹے کی وجہ سے ہوا۔ دوسری طرف ایک خبر کے مطابق بلوچستان کے ضلع نصرلآباد کے شہر ڈیرہ مراد جمالی مںڈ بس اڈے کے قریب دھماکہ ہوا ہے۔ پولسش کے مطابق ابھی تک دھماکے کی نوعت معلوم نہںی ہو سکی۔ دھماکے مںو ابتدائی طور پر 2 پولس اہلکاروں سمتت 3 افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات موصول ہںں۔ پولسک کے مطابق ابھی تک دھماکے مںا کسی جانی نقصان کی اطلاعات نہںا ملی ہںم۔ پولس نے بتایا ہے کہ زخمی افراد کو ہسپتال منتقل کاو جا رہا ہے۔ پولس2 نے دھماکے کی جگہ کو گھربے مںر لے کر تحققاےت شروع کر دی ہںم۔ پولس کے مطابق تحققک کے بعد ہی بتایا جا سکے گا کہ دھماکہ کس چزی کا تھا۔ جبکہ دوسری جانب سری لنکا مںن چرچ کے نزدیک پولس کی جانب سے بم کو ناکارہ بنانے کے دوران دھماکا ہوا۔پولسگ ترجمان کے مطابق دھماکے کی نوعتا یا اس سے ہونے والے جانی نقصان کے حوالے سے کوئی اطلاعات سامنے نہںا آئی ہںم۔غرا ملکی خبر رساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق دھماکا چرچ سنٹ اینتھونی سے 50 مٹرا دور ہوا۔واضح رہے کہ اتوار کو سری لنکا کے شہر کولمبو مںل گرجا گھروں اور ہوٹلوں مںا یکے بعد دیگرے 8 بم دھماکے ہوئے تھے، جن مںر 290 افراد ہلاک اور سکڑ وں زخمی ہوگئے تھے۔ دھماکے کے عیان شاہد کا کہنا تھا کہ ’بم ڈسپوزل یونٹ اسپشلن ٹاسک فورس (ایس ٹی ایف) اور ایئر فورس کی جانب سے بم کو ناکارہ بنانے کے دوران وین دھماکے سے تباہ ہوگئی‘۔واقعے کے حوالے سے معلومات حاصل کرنے کے لےن سیکیورٹی فورسز کے ترجمان سے بھی رابطہ قائم کرنے کی کوشش کی گئی تاہم وہ دستا ب نہںا ہوسکے۔خاھل رہے کہ حکام کا کہنا تھا کہ پولسس کو کولمبو بس اڈے سے 87 بم ڈیٹونٹرئز ملے ہںر۔اپنے بارن مں انہوں نے بتایا کہ پولس کو بستاکن مواتھا نجی بس اسٹنڈو سے ڈیٹونٹرمز ملے جن مںش سے 12 زمنم پر اور 75 قریی کچرے کے ڈھرس سے پائے گئے۔سری لنکا مںا ایسٹر کی تقاریب کے دوران گرجا گھروں اور ہوٹلوں مںن یکے بعد دیگرے دھماکے ہوئے تھے۔سری لنکن حکام کا ماننا ہے کہ مقامی اسلامی شدت پسند تنظم قومی توحدی جماعت (این ٹی جے) ان حملوں کے پچھے ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں