14

بادشاہ کا سوال

سکندرِاعظم دنیا فتح کرنے کے لیے جگہ جگہ پھر رہا تھا ۔ اس نے ایک بہت بڑے ملک پر چڑھائی کا ارادہ کیا۔ وہاں کا بادشاہ سکندر کی فوج سے بڑا لشکر رکھتا تھا۔ مگراس نے جنگ کے بجاے صلح کے لئے پیش قدمی کی۔ سکندر نے اس کا بھاری لشکر دیکھ کر کہا :”

سکندرِاعظم دنیا فتح کرنے کے لیے جگہ جگہ پھر رہا تھا ۔ اس نے ایک بہت بڑے ملک پر چڑھائی کا ارادہ کیا۔ وہاں کا بادشاہ سکندر کی فوج سے بڑا لشکر رکھتا تھا۔ مگراس نے جنگ کے بجاے صلح کے لئے پیش قدمی کی۔ سکندر نے اس کا بھاری لشکر دیکھ کر کہا :” اگر تو صلح کے لیے آیا ہے تو اتنی بڑی فوج لانے کی کیا ضرورت تھی ۔ معلوم ہوتا یے، تیرے دل میں دغا یے”۔ بادشاہ ے کہا: “سکندر! دغا کم زورں کا شیوا یے ۔ مقدر والے کبھی دغا نہیں کرتے۔ اپنی فوج ساتھ کا مقصد یہ جتانا یے کہ کسی خوف کی بنا پر اطاعت نہیں کر ریے، بلکہ اس لیے کر رہے ہیں کہ فی زمانہ تیرا اقبال بلند ہے”۔ سکندر نے صلح کا ہاتھ بڑھا دیا۔ بادشاہ نے سکندر کے اعزاز میں ایک پر تکلف دعوت کا انتظام کیا،پھر اسے ایک وسیع و عریغ خیمے میں لایا گیا اور بیش بہا لعل و جواہر قیمتی برتن میں بھر کر اس کے سامنے رکھ دیے گئے۔ بادشاہ نے کہا :” سکندرِاعظم! کھایئے۔”سکندر نے حیرت سے کہا:”لعل و جواہر انسان کی غذا نہیں ہیں۔” بادشاہ نے پوچھا:” پھر آپ کیا کھاتے ہیں! تعجب ہے، کیا کھانے والی چیزیں آپ کے ملک میں نہیں ملتیں جو آپ اس قدر تکلیف و مصیبت برداشت کرکے دنیا بھر میں مارے مارے پھرتے ہیں اور اپنے ساتھ بے شمار مخلوق کو عذاب میں مبتلا کئے ہوے ہیں، آخر کیوں”سکندر لا جواب ہو گیا۔ دوسری جانب سکندرِ اعظم اپنے استاد ارسطو کی تعریف

میں رطب اللسان ہے ۔ ’’ارسطو زندہ رہے گا تو ہزاروں سکندر تیار ہو جائیں گے مگر ہزاروں سکندر مل کر ایک ارسطو کو جنم نہیں دے سکتے۔‘‘ وہ مزید کہتا تھا۔۔۔! ’’میر اباپ وہ بزرگ ہے جو مجھے آسمان سے زمین پر لایا مگر میرا استاد وہ عظیم بزرگ ہے جو مجھے زمین سے آسمان پر لے گیا۔‘‘ سکندر کا باپ فیلقوس مقدونیہ کا بادشاہ اور اس کی ماں اولمپیا س مقدونیہ کی ملکہ حسن و جمال کا انمول عجوبہ تھی۔ اس کا خواب تھا کہ اس کا فرزند فاتح عالم کا تاج اپنے سر سجا لے ۔ اپنے خواب کی تعبیر کو پانے کیلئے سکندر کے اساتذہ کو تلقین کی کہ علم و فلسفہ کے علاوہ اسے تمام حربی ہنر و کمالات کے جواہر سے بھی روشناس کروائیں ۔ اس نہج پر اس کی تربیت استوار ہوئی ۔ محل کے پر سکون ماحول میں اس وقت اضطراب پیدا ہو ا جب بادشاہ فیلقوس نے دوسری شادی رچالی۔ ملکہ اولمپیاس سوکن کو برداشت نہ کر سکی اور محل چھوڑ کر شہر کے باہر رہائش پذیر ہو گئی۔ البتہ ذی ہوش ملکہ نے سکندر کو محل میں سکونت پذیر ہونے کی ہدایت کی اور خود شاہی سیاست پر نظر رکھی۔ سکندر کی اپنی سوتیلی ماں اور اس کے عزیز و اقارب کے ساتھ ٹھن گئی۔ بات ہاتھا پائی تک جا پہنچی ۔ بادشاہ نے بیٹے کو زبردست ڈانٹ پلادی ۔ اوریہ کہ محل کے ایک محافظ ’’پاسنیاس‘‘ کی بادشاہ کے نئے سسر سے جھڑپ ہو گئی‘ اسے در پردہ ملکہ کی حمایت حاصل تھی‘ اس نے آؤ دیکھا نہ تاؤ‘ بادشاہ کوخنجر کے پے در پے وار کر کے ہلاک کر دیا۔ شاہی محل میں مامور دیگر محافظوں نے قاتل کا کام بھی تمام کر دیا‘ بادشاہ خاک نشین ہوا تو اس کی عمر سینتالیس برس تھی۔ بازی پلٹ گئی ۔ سکندر تخت نشین ہو گیا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں