30

ایک بہترین ماں بننا چاہتی ہیں تو یہ چیز استعمال کریں ۔۔۔۔ جدید تحقیق میں ایسی شرمناک چیز کا نام تجویز کر دیا گیا کہ آپ کو یقین نہیں آئے گا

اوٹاوا (ویب ڈیسک) کینیڈین خواتین کی رائے ہے کہ ایک بہتر ماں بننے کے لیے بھنگ کا استعمال مثبت ہو سکتا ہے۔ کینیڈا میں گزشتہ برس اکتوبر میں بھنگ کے استعمال کو قانونی چھتری فراہم کی گئی تھی۔ کینیڈا کی خواتین کے دو ہم خیال گروپوں نے اس عام تصور کی نفی کی مہم شروع

کر رکھی ہے کہ بھنگ کا نشہ کرنے والی خواتین اچھی مائیں ثابت نہیں ہو سکتیں۔ ان گروپوں سے منسلک ایک خاتون کیرن سیئر کا کہنا ہے کہ بھنگ کے استعمال سے ممتا کےعمومی رویے میں بہتری آتی ہے۔ کیرن سیئر نے مزید کہا کہ ممتا میں بھنگ سے پیدا ہونے والی گراوٹ کے تصور میں تبدیلی از حد ضروری ہے۔ کیرن سیئر کا مزید کہنا ہے کہ یہ وقت کی ضرورت ہے کہ خاندان کے بزرگوں اور سماجی کارکنوں کی تربیت کی جائے اور ان پر واضح کیا جائے کہ بھنگ جیسی نشہ آور شے کے استعمال سے ذہنی روش میں منفی تبدیلی پیدا نہیں ہوتی۔ کینیڈا میں گزشتہ برس اکتوبر میں بھنگ کے استعمال کو قانونی چھتری فراہم کی گئی تھی۔ سیئر کے مطابق لوگوں کی معلومات میں اضافہ ضروری ہے اور وہ خود جب بھنگ استعمال کر لیتی ہیں تو اُن میں پھرتی اور چابک دستی بڑھ جاتی ہے۔ اپنے تجربے کی روشنی میں کینیڈین خاتون کا کہنا ہے کہ وہ اس حالت میں اپنے گھر کی زیادہ بہتر دیکھ بھال کرتی ہیں اور بچوں کے ساتھ ان کے برتاؤ میں بھی گرمجوشی اور بہتری آ جاتی ہے۔ کیرن سیئر کے ان خیالات کا سماجی رابطے کی ویب ساسٹ فیس بُک پر سینکڑوں خواتین نے خیر مقدم کیا ہے۔ کیرن سیئر کے فیس بُک پیج کا نام ’پھول میرے دوست‘ یا (Des fleurs ma chere (Flowers my dear ہے۔ اس فیس بُک پیج پر ہر طبقہٴ فکر کی خواتین موجود ہیں۔ اس گروپ میں شامل خواتین کا تعلق کاروبار، نفسیات، ماڈلنگ اور فوٹوگرافی کے شعبوں سے بھی ہے۔ اسی طرح کا ایک اور گروپ ’مَدر میری’ یا Mother Mary کے نام سے ہے۔ اس فیس بک گروپ میں پانچ ہزار خواتین شامل ہیں اور یہ بھی کیرن سیئر کا ہم خیال ہے۔ اس گروپ کی ایک خاتون جورڈانا زابلٹسکی کا کہنا کہ اب منشیات کے استعمال کے بعد شرمندگی کے احساس کو ترک کرنے کا وقت ہے۔ کئی ممالک میں بھنگ کی آمیزش والی فوری طور پر تیار ہونے والی کافی دستیاب ہے دوسری جانب طبی معالجین ایسے گروپوں کے ان نظریات سے متفق نہیں ہیں۔ کینیڈا کی وزارت صحت نے والدین کو متنبہ کر رکھا ہے کہ بھنگ کے استعمال سے تمباکو نوشی کی عادت بڑھ سکتی ہے اور اُن میں بچوں کی نگہداشت اور تربیت میں کمی کا رجحان پیدا ہونے کے قوی امکانات ہیں۔ وزارت صحت کے انتباہ میں یہ بھی کہا گیا کہ بھنگ کے استعمال کے بعد کسی ایمرجنسی میں فوری فیصلے میں کمی بھی ممکن ہے۔ بھنگ کی حامی خواتین کا موقف ہے کہ اس کا استعمال ڈپریشن یا اینزائٹی کے لیے ڈاکٹر کی تجویز کردہ سکون آور ادویات سے بہتر ہے۔ کیرن سیئر کے مطابق بھنگ سکون بخش کیمیائی مرکبات کا بہترین متبادل ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں