28

توجہ بھائی توجہ : مولوی خادم حسین رضوی کو کب رہا کیا جانیوالا ہے ؟ خبر آ گئی

لاہور(ویب ڈیسک)حکومت اور تحریک لبیک پاکستان میں بیک ڈور رابطوں کے بعد بہت جلد مولانا خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کی رہائی کے امکانات پیدا ہوگئے۔باوثوق ذرائع کے مطابق حکومت اور تحریک لبیک پاکستان میں بیک ڈور رابطوں کا سلسلہ جاری ہے اور ان رابطوں کا مثبت نتیجہ سامنے آیا ہے ۔
تحریک لبیک پاکستان کی قیادت نے آسیہ مسیح کیس کے بارے میں اعلیٰ عد لیہ کے فیصلوں کو تسلیم کرنے سمیت آئندہ کسی بھی اعلی شخصیت کے واجب القتل اور کافر قرار دیئے جانے کے فتوے نہ دینے کی یقین دہانی کر و ائی ہے۔یقین دہانی کے بعد حکومت نے قائدین اور گرفتار کارکنوں کی رہائی پر غور شروع کردیا ہے تاہم تحریک لبیک پاکستان کی قیادت اور کارکنوں کیخلاف فیض آباد دھرنا سمیت دیگر مقدمات عدالتی فیصلہ آنے تک برقرار رہیں گے۔تحریک لبیک کی طرف سے حکومت کو یقین دہانی کروائی گئی ہے کہ وہ آسیہ مسیح کیس میں اعلی عدلیہ کے فیصلوں کو تسلیم کرے گی تاہم ضمانت پر رہائی کے بعد اس اہم معاملے پر روایتی کا نفر نسز اور مظاہرے ہونگے البتہ کوئی بڑا دھرنا یا احتجاج نہیں کیا جائیگا۔ذرائع کے مطابق تحریک لبیک کی قیادت نے یہ فیصلہ ان کی گرفتاری کے بعد کارکنوں کی طرف سے کسی بڑے ردعمل کے سامنے نہ آنے کے بعد کیا اوراب اعلی عدلیہ کی طرف سے فیض آباد دھرنا والوں کیخلاف کارروائی کا بھی حکم دیدیا ہے جس کی وجہ سے تحریک لبیک اوراس کی قیادت کیلئے مشکلات مزید بڑھ جائیں گی۔تحریک لبیک کی قیادت کو مشورہ دیا گیا ہے وہ پرامن طور پر اپنی تحریک کو چلائیں اور جن ایشوز پر انہیں حکومت سے اختلاف ہو اس پر بے شک پرامن احتجاج کریں لیکن وہ اختلاف کی بنا پر کسی بھی اعلی شخصیت کو واجب القتل اور کافر قرار دیئے جانے کا فتوی نہیں دیں گے اور نہ ہی کارکنوں کو قومی اداروں کیخلاف بغاوت پر اکسائیں گے۔تحریک لبیک پاکستان کی قیادت ان مشوروں کو مان کر حکومت سے پس پردہ مفاہمت کررہی ہے۔(ش س م)
[wpna_ad placement_id=”1934123506654111_1934123563320772″]

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں