54

عالمی منظر نامہ یکسر تبدیل۔۔۔۔ روس نے امریکہ کے ساتھ ایسا معاہدہ ختم رک دیا کہ پوری دنیا میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ، دنیا تیسری عالمی جنگ کے دہانے پر پہنچ گئی

واشنگٹن ( مانیٹرنگ ڈیسک ) امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے روس پر ایٹمی ہتھیاروں کے معاہدے کی خلاف ورزی کا الزام لگاتے ہوئے ایٹمی ہتھیاروں میں کمی کا معاہدہ معطل کردیا اور گزشتہ سال اکتوبر میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی روس کے ساتھ جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کو ختم کرنے کا اعلان کیا تھا ،،
تفصیلات کے مطابق امریکا نے روس پر ایٹمی ہتھیاروں کے معاہدے کی خلاف ورزی کا الزام لگاتے ہوئے ایٹمی ہتھیاروں میں کمی کا معاہدہ معطل کردیا ، امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے معاہدے کی منسوخی کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ امریکا کی جانب سے مکمل تعاون کے باوجود روس کافی عرصے سے ایٹمی معاہدے کی شقوں کی خلاف ورزی کرتا رہا ہے ، جو اب ناقابل برداشت ہوگیا ہے ، جس پر امریکی وزیر خارجہ کا کہنا ہے ، کہ کوئی بھی معاہدہ یک طرفہ زیادہ عرصے تک نہیں چل سکتا ہے ، روس کے رویے کی وجہ سے امریکا انتہائی قدم اٹھانے پر مجبور ہوا ہے ، جو کہ خطے میں طاقت کے توازن کو برقرار رکھنے کے لیے بے حد ضروری تھی ، گزشتہ سال اکتوبر میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے روس کے ساتھ جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کو ختم کرنے کا اعلان کیا تھا ، ان کا کہنا تھا کہ روس نے 1987 کے انٹرمیڈیٹ رینج نیوکلیئر فورسز (آئی این ایف) معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے ، آئی این ایف معاہدے کے مطابق زمین سے درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے میزائلوں پرپابندی ہے ، یہ فاصلہ 500 سے 5500 کلومیٹر تک کا ہے ،
امریکی صدر نے یہ بھی کہا تھا کہ امریکا روس کو ان ہتھیاروں کی اجازت نہیں دے گا ، روس برسوں سے اس معاہدے کی پاسداری نہیں کر رہا گیا ، روسی صدر ولادی میرپیوٹن نے 2007 میں اعلان کیا تھا ، کہ یہ معاہدہ اب روسی مفادات میں نہیں روس کی جانب سے یہ اعلان امریکا کے 2002ء اینٹی بیلسٹک میزائل معاہدے سے نکل جانے کے بعد سامنے آیا تھا ، واضح رہے کہ 2014ء میں سابق امریکی صدر براک اوباما نے روس پر آئی این ایف کی خلاف ورزی کا الزام عائد کیا تھا ، جب روس نے مبینہ طور پرزمین سے مار کرنے والے ایک کروز میزائل کا تجربہ کیا تھا ،

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں